Thursday, 28 November 2013

Dil Youn Dharka Keh Pareshan Hua


Roman Urdu      رومن اردو

Dill Youn Dharka Keh Pareshan Hua Ho Jaisey
Koi Bedhiyani Mein Nuqsaan Hua Ho Jaisey

Rukh Badlta Hoon To Shah Ragg Mein Chubhan Hoti Hai
Ishq Bhi Jang Kaa Maidaan Hua Ho Jaise
Jism Youn Lams e Rafaqat Kay Assar Sey Nikkla
Doosrey Dour Kaa Saaman Hua Ho Jaisey

Dill Nay Youn Phir Mere Seeney Mein Faqeeri Rakh Di
Toot Kar Khood Hee Pasheymaan Hua Ho Jaisey

Thaam Kar Hath Mera Aisey Wo Roya Mohsin
Koi Kaafir Sey Muslimaan Hua Ho Jaisey

Urdu   اردو

دل یوں دھڑکا کہ پریشان ہوا ہو جیسے
کوئی بے دھیانی میں نقصان ہوا ہو جیسے

رخ بدلتا ہوں تو شہ رگ میں چبھن ہوتی ہے
عشق بھی جنگ کا میدان ہوا ہو جیسے

جسم یوں لمسِ رفاقت کے اثر سے نکلا
دوسرے دور کا سامان ہوا ہو جیسے

دل نے یوں پھیر میرے سینے میں فقیری رکھ دی
ٹوٹ کر خود ہی پشیمان ہوا ہو جیسے

تھام کر ہاتھ میرا ایسے وہ رویا محسن

کوئی کافر سے مسلمان ہوا ہو جیسے

1 comment:

Advertisement